کونسل آف پاکستان نیوزپیپر ایڈیٹرز کے صدر مجیب الرحمان شامی کی قیادت میں سی پی این ای کے اعلیٰ سطحی وفد نے وزیر اعلیٰ سندھ سید قائم علی شاہ کی قیادت میں سندھ حکومت کے ایک وفد سے وزیر اعلیٰ ہاؤس میں ملاقات کی اور انہیں سی پی این ای کی جانب سے رائٹ ٹو انفارمیشن بل کا مسودہ پیش کیا۔اس موقع پر سندھ کے وزیر اعلیٰ جناب سید قائم علی شاہ نے سی پی این ای کی جانب سے قانونی مسودہ پیش کرنے کا خیر مقدم کرتے ہوئے یقین دلایا کہ سندھ حکومت اس مسودہ کو قانونی شکل دینے کے لئے جلد ہی سندھ اسمبلی میں پیش کرکے منظور کرے گی اور اگر اس سے پہلے مسودے میں ردو بدل کی ضرورت پیش ہوئی تو سی پی این ای سے مشاورت کی جائے گی۔انھوں نے آزاد اور ذمہ دار میڈیا کی تشکیل کیلئے سی پی این ای کے کردار کو سراہتے ہوئے میڈیا کے مختلف معاملات کے سلسلے میں سی پی این ای کے ساتھ مستقل روابط قائم رکھنے پر زور دیا۔ انہوں نے کہا کہ سندھ حکومت رائٹ ٹو انفارمیشن ، آزادی صحافت، آزادی اظہار رائے اور تمام بنیادی انسانی حقوق پر بھرپور یقین رکھتی ہے۔ انہوں نے اس موقع پر سی پی این ای کے انڈومنٹ فنڈ کیلئے سندھ حکومت کی جانب سے2 کروڑ روپے کی گرانٹ کا بھی اعلان کیا۔ قبل ازیں سی پی این ای کے صدر مجیب الرحمن شامی نے تقریر کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان کے ہر شہری کا آئینی حق ہے کہ وہ سرکاری امور سے متعلق مطلوبہ معلومات حاصل کریں جبکہ ریاستی اور حکومتی اداروں کی جانب سے اس تسلیم شدہ حق کی فراہمی کے ذریعے تمام ریاستی اور حکومتی امور میں شفافیت اور جواب دہی کے عمل کو تقویت حاصل ہوگی نتیجتاً بہتر حکمرانی کو فروغ ملے گا۔ انھوں نے کہا کہ سی پی این ای خبروں اور معلومات تک رسائی میں فروغ اور میڈیا کی آزادی کیلئے سرگرم عمل ہے جس کیلئے گزشتہ کئی ماہ سے صوبہ سندھ میں اخبارات کے ایڈیٹروں، سینئر صحافیوں اور نوجوانوں میں معلومات تک رسائی کے آئینی حق کے بارے میں شعور اجاگر کرنے کی مہم بھی شروع کی ہوئی ہے، اس مہم کے دوران انسانی حقوق کیلئے سر گرم عمل تنظیموں کی مدد سے معلومات تک رسائی کے حق کا بل تیار کیا گیا ہے تاکہ سندھ حکومت سندھ اسمبلی میں قانون سازی کرسکے۔ حکومتی وفد میں صوبائی وزراء ڈاکٹر سکندر میندھرو اور سید مراد علی شاہ اور صوبائی مشیر اطلاعات مولا بخش چانڈیو سمیت پیپلزپارٹی کے متعدد اراکین صوبائی اسمبلی موجود تھے جبکہ سی پی این ای کے وفد میں سیکریٹری جنرل ڈاکٹر جبار خٹک، الیاس شاکر، شاہین قریشی، ایاز خان، مشتاق احمد قریشی، حامد حسین عابدی، خوشنود علی خان، عارف نظامی، قاضی اسد عابد، رمیزہ مجید نظامی، رحمت علی رازی، عامر محمود، فیصل زاہد ملک، مقصود یوسفی، نصیر ہاشمی، مہتاب خان، نجم الدین شیخ، جاوید مہر شمسی، سید محمد منیر جیلانی، عبدالخالق علی( مارشل) سعید خاور، غلام نبی چانڈیو، عبدالرحمن منگریو، یونس مہر، یونس ریاض، زاہدہ عباسی،حسینہ جتوئی، سدرہ کنول، بلقیس جہاں، فوزیہ شاہین سمیت سی پی این ای کے متعدد اراکین شامل تھے۔ بعدازاں وزیر اعلیٰ سندھ نے سی پی این ای کے وفد کے اعزاز میں ایک پر تکلف عشائیہ بھی دیا۔